قبائلی اضلاع

فاٹا سیکرٹریٹ بند سکول اور ہسپتال کھول دے : ایف آر بنوں قبائل

ایف آر بنوں کے احمدزئی اور اتمانزئی وزیر قبائل نے کچہری جانے اور انتظامیہ کے حکام سے ملنے سے انکار کیا ہے۔ ان قبائل کا موقف ہے کہ اس وقت تک کچہری نہیں جائینگے اور انتظامیہ کے ارکان ملاقات نہیں کرینگے جب تک فاٹا سیکرٹریٹ کم تعداد پر بند کئے گئے سکول اور غیرفعالیت کی بنا پر بند کئے گئے ہسپتال دوبارہ کھولنے کا اعلان نہ کرے۔

پیرکو بنوں ٹاؤن شپ میں ان قبائلی عمائدین کا جرگہ منعقد ہوا جس میں فیصلہ کیا گیا کہ جو بندہ کچہری گیا، کمشنر، ڈپٹی کمشنر یا اسسٹنٹ پولیٹیکل ایجنٹ سے ملا اس پر پانچ لاکھ روپے جرمانہ عائد کیا جائے گا۔ اس بارے ٹی این این سے بات کرتے ہوئے قبیلے کے رہنما کا کہنا تھا ” یہ لوگ ہمیں کیوں جاہل بنانا چاہتے ہیں ہمیں تعلیم سے کیوں اتنا دور رکھنا چاہتے ہیں۔ یہ فاٹا کے پیسے سیکرٹریٹ میں خرچتے ہیں اور یہ ہمیں قابل قبول نہیں۔ ہم چاہتے ہیں کہ فاٹا کے پیسے ان ہی سکولوں اور ہسپتالوں پہ خرچ ہو جو آج ویران پڑے ہیں۔ “

فاٹا سیکرٹریٹ کا موقف جب جانا گیا تو ان کا کہنا تھا کہ اساتذہ، ڈاکٹرز اور فنڈز کی کمی کے باعث اُن سکولوں کو بند کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے جہاں طلبا کی تعداد 60 سے کم ہو تاہم گرلز سکولوں کے لئے یہ شرح تیس رکھی گئی ہے جبکہ فاٹا سیکرٹریٹ نے غیر فعال ہسپتالوں کی ندش کا فیصلہ بھی کیا ہے۔

Show More

متعلقہ پوسٹس

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button