قبائلی اضلاع میں سیاحت کیلئے 25 ارب سے زائد ترقیاتی سکیموں کی منظوری

خیبر پختونخوا کے سینئر وزیر برائے سیاحت وثقافت عاطف خان نے کہا ہے کہ ضم شدہ قبائلی میں سیاحت، ثقافت اور کھیلوں کے فروغ سمیت نوجوانوں کو باروزگار بنانے اور آرکیالوجی کے لئے 25 ارب سے زائد ترقیاتی سکیموں کی منظوری دی جا چکی ہے, اس کے علاوہ ضم شدہ اضلاع میں ان شعبوں کی ترقی کے لئے مزید ترقیاتی سکیمیں بھی عمل میں لائی گئی ہیں۔

ضم شدہ اضلاع کی ضلعی انتظامیہ کے عہدیداروں کے ایک اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے سینئر وزیر نے کہا کہ قبائلی اضلاع میں سیاحتی ترقی کے لیے ساڑھے 9 ارب اور کھیلوں کے لئے ساڑھے آٹھ ارب روپے کی مختلف ترقیاتی سکیموں کی منظوری دی جا چکی ہے، قبائلی اضلاع میں ثقافتی مراکز بنانے کے لئے بھی دو ارب روپے مختص کئے گئے ہیں، اس کے علاوہ قبائلی اضلاع کے نوجوانوں کو باروزگار بنانے کے لئے 3 ارب روپے مختص کئے گئے ہیں اور 5 ارب روپے نوجوانوں کو دیگر سہولیات فراہم کرنے پر خرچ کئے جائیں گے۔

اجلاس میں سیکرٹری سیاحت کامران رحمان سمیت تمام قبائلی اضلاع کے ڈپٹی واسسٹنٹ کمشرز نے شرکت کی، متعلقہ ڈپٹی کمشنرز نے سینئر وزیر کو ضم شدہ اضلاع میں سیاحت،سپورٹس،کلچر اور آرکیالوجی کے حوالے سے بریفنگ دی۔

سینئر وزیر نے ڈپٹی کمشنرز کو متعلقہ اضلاع میں ضلع اور تحصیل کی سطح پر سپورٹس کمپلیکسز اور 1000 گراؤنڈ سکیم کے تحت کھیلوں کے میدان بنانے کے لئے جگہوں کی نشاندہی کرنے کی ہدایت کی اور کہا کہ اضلاع کی سطح پر سپورٹس کمپلیکس بنانے پر 75 کروڑ روپے اور تحصیل سطح پر سپورٹس کمپلیکس بنانے پر 25 کروڑ روپے خرچ کئے جائیں گے۔

انہوں نے ہدایت کی کہ ضلعی انتظامیہ ضم شدہ اضلاع میں سیاحتی مقامات اور ایڈونچر ٹورازم کے لئے بھی جگہوں کی نشاندہی یقینی بنائے، قبائلی اضلاع میں سکی ریزارٹ اور چئیر لفٹ سمیت دیگر ایڈونچر ٹورازم کے بے پناہ مواقع موجود ہیں اس لئے ضلعی انتظامیہ محکمہ ثقافت کیساتھ ملکر ضم شدہ اضلاع میں دو مہینوں کے اندر میگا کلچر ایونٹ کا انعقاد بھی یقینی بنائے اور محکمہ آرکیالوجی کے ساتھ ملکر ضم شدہ اضلاع میں آرکیالوجیکل سائٹس کی نشاندہی کرے تاکہ اسے محفوظ بنایا جاسکے۔

Show More

جواب دیں

Back to top button
Close