قومی

قومی اسمبلی اورصوبائی اسمبلیوں کے 35حلقوں میں ضمنی انتخابات آج ہورہے ہیں

قومی اور صوبائی اسمبلیوں کی مجموعی طور پر 35 میں سے 34نشستوں پر ضمنی انتخابات ہو رہے ہیں، جن میں قومی اسمبلی کے 11 اور صوبائی اسمبلیوں کے 23 حلقے شامل ہیں۔

قومی اسمبلی کی گیارہ اور صوبائی اسمبلیوں کی 24نشستوں کیلئے تین سو سترامیدواروں کے درمیان مقابلہ ہوگا۔الیکشن کمیشن نے انتخابات کے خوش اسلوبی سے انعقاد کیلئے تمام انتظامات مکمل کرلئے ہیں۔ضمنی انتخابات کیلئے سات ہزار چار سو سے زائد پولنگ سٹیشن قائم کئے گئے ہیں ان میں سے ایک ہزار سات سو ستائیس کو انتہائی حساس قرار دیا گیا ہے۔الیکشن کمیشن نے نجی چینل کو ہدایت کی ہے کہ شام چھ بجے سے پہلے نتائج نشر نہ کئے جائیں۔

قومی اور صوبائی اسمبلیوں کی مجموعی طور پر 35 میں سے 34نشستوں پر ضمنی انتخابات ہو رہے ہیں، جن میں قومی اسمبلی کے 11 اور صوبائی اسمبلیوں کے 23 حلقے شامل ہیں۔ قومی اسمبلی کیلئے اسلام آباد سے 1، پنجاب 8، سندھ 1اور خیبر پختونخوا سے 1نشست پر انتخاب ہوگا۔ اسی طرح صوبائی اسمبلیوں کیلئے پنجاب کے 10، سندھ کے 2، خیبر پختونخوا 9 اور بلوچستان کے 2 حلقوں میں بھی ضمنی الیکشن ہوگا۔ضمنی انتخابات میں حصہ لینےکیلئے کل 661امیدواروں نے کاغذات نامزدگی جمع کروائے، جن میں 16امیدواروں کے کاغذات مسترد اور 645 کے منظور ہوئے جوآج انتخاب لڑیں گے۔الیکشن کمیشن کا کہنا ہے کہ 34حلقوں میں 92لاکھ، 83ہزار 74ووٹرز حق رائے دہی استعمال کرسکیں گے جبکہ 51 ہزار 235 انتخابی عملہ خدمات سر انجام دے گا

سندھ اسمبلی کیلئے کراچی کے 2 حلقوں میں ووٹ ڈالے جائیں گے۔ این اے 243 میں پی ٹی آئی کے عالمگیر خان، ایم کیوایم سے عامر چشتی، پی ایس 87 ملیر میں پیپلز پارٹی کے محمد ساجد اور پی ٹی آئی کے قادر بخش گبول میں مقابلہ ہوگا۔بلوچستان کے 2 حلقوں پی بی 35 مستونگ اور پی بی 40 پر الیکشن ہوگا،۔الیکشن کمیشن کے مطابق ملک بھر کے 35حلقوںکیلئے 99لاکھ 24 ہزار 700بیلٹ پیپرز چھاپے گئے ہیں، ریٹرننگ افسران نے انہیں پریذائیڈنگ افسران کے حوالے کردیا ہے ۔7 ہزار 489پولنگ اسٹیشنز بنائے گئے ہیں، جن میں سے ایک ہزار 727پولنگ اسٹیشنز کو حساس قرار دیا گیا ہے۔

Show More

متعلقہ پوسٹس

Back to top button