قومی

سانحہ پشاور کے بعد تین سو بتیس افراد کو تختہ دار پر لٹکایا گیا: رپورٹ

پشاور آرمی پبلک سکول پر ہونے والے دہشت گردوں کے حملے کے بعد اب تک پورے پاکستان میں دو سو بتیس  جرائم پیشہ افراد کو تختہ دار پر لٹکا کر منطقی انجام تک پہنچایا گیا ہے۔وزارت داخلہ کی جانب سے پالیمنٹ میں جمع کئے رپورٹ کے مطابق پاکستان میں پھانسی پر چھ سال سے لگائی گئی پابندی آرمی پبلک سکول پر حملے کے بعد اٹھائی گئی جس کے تحت اب تک دہشت گردی اور دیگر جرائم میں ملوث تین سو بتیس افراد کو پھانسی پر لٹکایا گیا ہے۔

وزارت داخلہ کے اس رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ آرمی پبلک سکول پر ہونے والے حملے کے بعد بننے والے نیشنل ایکشن پلان کے تحت ایک سو بہتر دینی مدارس کو بند کردیا گیا ہے ۔ رپورٹ کے مطابق ان مدارس پر کلعدم تنظیموں سے روابط کا الزام تھا اور اسکے علاوہ مختلف دہشت گرد اور شدت پسند تنظیموں کے ویب سائٹس اور یو آر ایل بھی بلاک کردئے ہیں۔ اس رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ گزشتہ سال غیر رجسٹرد دس کروڑ موبائل سم بھی بلاک کردئے گئے ہیں۔

Show More

متعلقہ پوسٹس

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button