قومی

وفاقی حکومت نے بینظیر انکم سپورٹ پروگرام کے پیسوں میں 66 روپے کا اضافہ کیا ہے

وفاقی حکومت نے بینظیر انکم سپورٹ پروگرام کے تحت نادار اور غریب عوام کو ملنے والی رقم میں چھیاسٹھ روپے فی کس کا اضافہ کیا ہے۔ اس اضافے کے تحت تین مہینے بعد اب ایک خاندان کو ساڑھے چار ہزار روپے کی بجائے چارہزار سات سو روپے دیے جائینگے۔

وزارت خزانہ کی جانب سے جاری کئے گئے بیان کے مطابق یہ اضافہ گزشتہ ایک سال سے ہونے والے مہنگائی کے اضافے کےمطابق کای گیا ہے۔ خیال رہے کہ گزشتہ سال بجٹ پیشگی کے دوران وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار کا کہنا تھا کہ بینظیر انکم سپورٹ پروگرام کے تحت امدادی رقم لینے والے پچاس لاکھ عوام کے پیسو میں اضافہ ممکن نہیں جبکہ حکومت کی کوشش رہے گی کہ مستفید عوام کی یہ تعداد پچپن لاکھ تک پہنچائے۔

ٹی این این سے بات کرتے ہوئے بینظیر انکم سہورٹ پروگرام سے مستفید ہونے والے غریب عوام نے حکومت کے اس اضافے کا خیرمقدم کیا ہے اور اسے سراہا ہے جبکہ دوسری جانب کئی افراد نے اسے کم گردانتے ہوئے اسے نہ ہونے کے برابر قرار دیا ہے ” جو اضافہ کیا گیا ہے یہ بہت کم ہے کیونکہ اس مہنگائی کے دور میں چھیاسٹھ روپے کچھ بھی نہیں ہے اس سے تو کلو دودھ بھی نہیں آتا۔ یہ پیسے تو آجکل بچے بھی نہیں لیتے اور پھر اسکے حصول کے لئے اتنی قطاروں میں کھڑا ہونا عوام کے لئے تکلیف کا باعث  بھی ہے۔ ‘‘

Show More

متعلقہ پوسٹس

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button