خیبر پختونخوا

چارسدہ ایک مرتبہ پھر نشانے پر، خودکش حملہ، 15 افراد جاں بحق

چارسدہ کی  تحصیل شب قدر میں سیشن کورٹ کے احاطے میں خودکش دھماکے کے نتیجے میں2 پولیس اہلکاروں، خاتون اور بچی سمیت 15 افراد جاں بحق  اور 20 زخمی ہوگئے۔

پولیس کے مطابق خودکش دھماکا اس وقت ہوا جب احاطہ عدالت کے گیٹ پر پولیس اہلکاروں نے خودکش حملہ آور کو روکنے کی کوشش کی ، جس کے بعد فائرنگ کا تبادلہ ہوا اور پھر حملہ آور نے خود کو دھماکے سے اڑا لیا۔

IMG_20160307_184320

دھماکا اس قدر شدید تھا کہ اس کی آواز دور دور تک سنی گئی، دھماکے کے نتیجے میں احاطہ عدالت میں کھڑی کئی گاڑیوں میں آگ لگی گئی۔ دھماکے کے بعد لوگوں نے اپنی مدد آپ کے تحت زخمیوں کو تحصیل اسپتال منتقل کیا ، جبکہ شدید زخمیوں کو لیڈی ریڈنگ اسپتال پشاور منتقل کردیا گیا ہے۔
ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر (ڈی پی او) سہیل خالد کے مطابق  دھماکا خودکش تھا، حملہ آور نے عدالت کے احاطے میں گھسنے کی کوشش کی تاہم داخلی دروازے پر موجود پولیس اہلکاروں نے اسے روک لیا۔

IMG_20160307_184401
ڈی آئی جی مردان سعید وزیرنے میڈیا سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ  حملہ آورکا ہدف پرہجوم عدالت تھا جہاں ججز ،وکلا اورشہری بڑی تعدادموجودتھیں ۔ لیکن گیٹ پر تعینات پولیس اہلکاروں نے بہادری کا مظاہرہ کیا ،پولیس اہلکاروں نے فائرنگ کے باوجود اپنی جان کی پرواہ نہ کرتے ہوئےحملہ آورکو آگے جانے سے روکا۔ وزیر اعظم نواز شریف نے خودکش دھماکے کی شدید مذمت کرتے ہوئے قیمتی جانوں کے زیاں دکھ اور افسوس کا اظہار کیا ہے۔

IMG_20160307_184330

حملے کی ذمہ داری کالعدم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) سے علیحدگی اختیار کرنے والے گروپ جماعت الاحرار نے قبول کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔ جماعت الاحرار کے ترجمان احساس اللہ احسان جانب سے کی جانے والی ای میل میں حملے کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ یہ حملہ بالخصوص سابق گورنر پنجاب سلمان تاثیر کے قاتل ممتاز قادری کی پھانسی کے انتقام کے طور پر کیا گیا۔

Show More

متعلقہ پوسٹس

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button