خیبر پختونخوا

نہ سیکورٹی اور نہ ہی سیکورٹی کے لئے اقدامات کی لسٹ، اوپر سے مقدمے بھی درج: کےپی پرائیویٹ سکول تنظیم

خیبرپختونخوا پرائیویٹ سکولوں کی تنظیم نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ سیکورٹی کے نام پر اداروں کے ہیڈ ماسٹرز کے خلاف درج کئے گئے ایف آئی آر خارج کرے ورنہ تنظیم احتجاج پہ اتر آئیگی۔

منگل کو پشاور پریس کلب میں تنظیم ممبران کا پریس کانفرنس کے دوران موقف تھا کہ عوام کو تحفظ فراہم کرن حکومت کی زمہ داری ہے جبکہ حکومت یہ زمہ داری عوام پر ڈال رہی ہے جو کہ سراسر زیادتی ہے۔

پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے تنظیم کے رکن انس تکریم کا کہنا تھا کہ صوبائی حکومت کی جانب سے انہیں کسی قسم کی لسٹ جاری نہیں کی گئی کہ سیکورٹی کی مد میں کیا کیا اقدامات کرنے ہیں اور کون سے آلات کی تنصیب ضروری ہے۔ اس کے باوجود بھی پولیس سکولوں پر چھاپے مار کر پرنسپلز کے خلاف مقدمے درج کرتے ہیں جس سے طلبا کی ذہنیت متاثر ہورہی ہے۔ تنظیم کے ایک اور رکن ذاکر شاہ نے پریس کانفرنس کو بتایا کہ حکومت جب سرکاری سکولوں کے تحفظ پر کروڑوں روپے خرچ کررہی ہے تو ہمارے پرائویٹ سکولوں کا حق بھی بنتا ہے کہ حکومت ہہماری بھی سیکورٹی کے انتظامات کریں۔ اس موقع پر تنظیم نے صوبائی حکومت سے مطالبہ کیا کہ ان کو سیکورٹی کی مد میں دو لاکھ روپے فی سکول ادا کیا جائے اور جن سکولوں نے سیکورٹی اقدامات کئے ہیں ان کو سرٹیفیکیٹ جاری کیا جائے تا کہ پولیس آئندہ ان کو تنگ نہ کرے۔

Show More

متعلقہ پوسٹس

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button