خیبر پختونخوا

بٹگرام میں بچیوں کا سکول باڑے میں تبدیل

بٹگرام (عطاء اللہ نسیم)صوبائی حکومت کی تعلیمی ایمرجنسی تاحال بٹگرام تک نہیں پہنچ سکی ۔ گورنمنٹ گرلز پرائمری سکول ٹاساکنائی جانوروں کے باڑے میں تبدیل کردیاگیا ہے۔ 20سال قبل حکومت کی جانب سے لاکھوں روپے کی لاگت سے تعمیر شدہ اس سکول میں تاحال تدریسی سرگرمیاں شروع نہ ہوسکی اور مقامی افراد نے سکول کو باڑے میں تبدیل کررکھا ہے۔
دور جدید میں بھی ٹاسا کنائی کی بچیاں زیرتعلیم سے محروم ہیں، ان بچیوں کیلئے بننے والا سکول محض ایک عمارت ہے جس میں مویشی پالے جاتے ہیں ۔ سکول کا عملہ گھر بیٹھے تنخواہیں لے رہی ہے ۔ ٹاساکنائی کی بچیوں نے بتایاکہ انہیں پڑھائی کا بے حد شوق ہے ۔ ان کیلئے سکول کی عمارت تو موجود ہے لیکن تعلیمی سرگرمیاں نہیں شروع ہوسکی ۔
مقامی لوگوں کا کہناہے کہ علاقے کے لوگ انتہائی غریب ہے لیکن غربت کے باوجود سکول کیلئے 3کنال 6مرلے کی اراضی فراہم کی گئی ہے ۔ اراضی پر سکول کی عمارت تو تعمیر کردی گئی ہے لیکن پچھلے 20سال سے سکول میں استانی آئی نہ ہی عملے کا کوئی دوسرا ملازم۔
علاقے کے عوام نے مطالبہ کیا ہے کہ صوبائی حکومت تعلیمی ایمرجنسی کی رو سے ہنگامی بنیادوں پر گورنمنٹ پرائمری سکول ٹاساکنائی کو درس وتدریس کیلئے کھول دیا جائے۔

Show More

متعلقہ پوسٹس

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button