فیچرز اور انٹرویو

8 مارچ عالمی یوم خواتین کے طور پر منایا جارہا ہے، تقاریب کا اہتمام

عطااللہ خان

آٹھ مارچ عالمی یومِ خواتین، خواتین کے مسائل اور اُن کے حل کے لیے مختص دن ہے۔ ایک صدی قبل یہ دن سب سے پہلے آسٹریا، ڈنمارک، جرمنی اور سوئیٹزرلینڈ میں منایا گیا۔ ابتداء میں یہ دن کام کرنے والی خواتین کو روزگار کی فراہمی اور ترقی کے لیے یکساں مواقع و حقوق کے حصول کے لیے جدوجہد سے منسوب تھا۔

مگر آج ایک صدی بعد معاملہ مختلف ہے۔ اِس دن کو بین الاقوامی سطح پر منانے کا عمومی مقصد انسانی معاشرے اور خود صنفِ نازک میں اس شعور کی بیداری ہے کہ عورت ہونا باعث عار نہیں بلکہ صد افتخار ہے۔

International-Womens-Day

اس موقع کی مناسبت سے ملک بھر میں جگہ جگہ خصوصی تقاریب کا اہتمام کیا گیا ہے جس میں خواتین کی آزادی، ان کے حقوق اور معاشرے میں ان کے مقام کے اوپر سیر حاصل بحث ہوگی اور معاشرے کی ساخت میں ان کے کردار کو خراج تحسین پیش کیا جائے گا۔

 برصغیر کی خواتین نے ہمیشہ اپنے حقوق کیلئے جدوجہد کی ہے۔ 1886ءمیں ”تحریکِ اصلاحِ خواتین“ میں مسلم خواتین نے شرکت کی اور خواتین کیلئے جدید تعلیم کی اہمیت کی طرف توجہ مبذول کروائی۔ آنیوالے برسوں میں خواتین نے اپنے آپ کو سیاسی میدان میں بھی منظم کرلیا تاکہ وہ تمام خواتین کیلئے حمایت حاصل کرسکیں۔ 1908ءمیں ”انجمن خواتین اسلام“ بنائی گئی جسکے ذریعہ خواتین کے حقوق‘ سماجی اصلاحات اور تعلیم کی طرف توجہ دی گئی۔ اس تحریک کی وجہ سے 1918 ءمیں آل انڈیا مسلم لیگ اور انڈین نیشنل کانگریس نے خواتین کے حق رائے دہی کی حمایت کی۔ 1928ءمیں فرانس سے سترہ سال پہلے ہندوستان میں خواتین کو مردوں کے برابر حق رائے دہی مل گیا۔ گورنمنٹ آف انڈیا کے ایکٹ 1935ءکے تحت 66 لاکھ خواتین کو حق رائے دہی ملا اور پہلی بار فیڈرل اسمبلی کی 250میں سے 9نشستیں اور کونسل آف سٹیٹ کی 150میں سے 6نشستیں خواتین کو حاصل ہوئیں۔

download

پاکستان کے معرضِ وجود میں آنے کے بعد خواتین اور انکی تنظیمیں کافی برسوں تک یہ سمجھتی رہیں کہ حکومت خود بخود خواتین کے حقوق کو وسعت دےگی۔ سماجی‘ معاشی اور سیاسی ہر سطح پر ان کی شرکت مردوں کے برابر کرےگی مگر افسوس کہ ایسا نہ ہوا۔

قائداعظمؒ کی سوچ کے برخلاف خواتین کو اُن کا حق نہ ملاتو خواتین کی وکالت کیلئے لابی کی ضرورت محسوس ہوئی۔ آزادی کے وقت خواتین کو سیاسی‘ تعلیمی اور معاشرتی شمولیت کے حقوق مل گئے تھے لیکن مساوی حقوق کے مطالبہ کی قدامت پسند اور مذہبی گروہوں نے مخالفت کی کہ خواتین کو ترقی کے عمل میں مردوں کے شانہ بشانہ شرکت نہ کرنے دیں۔ خواتین کے مساوی حقوق کیلئے خواتین کی ایک قلیل تعداد نے کوشش شروع کی۔

images

پاکستان کے پہلے وزیراعظم نوابزادہ لیاقت علی خان کی شریکِ حیات بیگم رعنا لیاقت علی خان نے ”اپوا“ کے نام سے ایک ویمنز والینٹیئر سروس بنائی۔ اس تنظیم کا مقصد یہ تھا کہ کم آمدنی والی خواتین کو سرگرم عمل رکھا جائے۔ مثال کے طور پر 1948ءمیں قومی اسمبلی کی خواتین ممبران نے خواتین کے معاشی حقوق کے تحفظ کیلئے ایک بل تجویز کیا مگر اس بل کو اس وقت تک ایجنڈے میں بھی شامل نہیں کیا گیا جب تک ہزاروں خواتین نے اسمبلی کا گھیراﺅ نہیں کرلیا۔ ”ویسٹ پنجاب مسلم پرسنل لائ“ کے تحت جائیداد کی وراثت بشمول زرعی اراضی میں خواتین کے حق کو تسلیم کیا گیا۔
اسکے علاوہ فیملی لاءآرڈیننس 1961ءکا بھی اضافہ ہوا۔ یہ سب ”اپوا“ کی بدولت ہی ممکن ہوا۔ 1948ءمیں ہی ”انجمن جمہوریت پسند خواتین“ قائم ہوئی جس کا ایجنڈا مزدور خواتین کیلئے مساوی تنخواہ‘ خواتین کیلئے ہاسٹلز اور بچوں کی دیکھ بھال کے مراکز کا قیام تھا۔

women day

اس صورتحال کا مقابلہ کرنے کیلئے خواتین محاذِ عمل (WAF)نے خواتین کے حقوق کی جنگ لڑنے کیلئے سرگرم پریشر گروپ اور لابی بنائی۔
WAFوہ پہلا پلیٹ فارم تھا جس کے ذریعے خواتین کو سوچے سمجھے منصوبے کے تحت سیاست‘ سوسائٹی میں کام کرنے‘ نوکریوں سے باہر رکھنے جیسی پالیسی کیخلاف آواز اُٹھائی گئی۔ ٹریڈ یونین کی آواز میں آواز شامل کی اور جب خواتین وکلاءکی ایسوسی ایشن نے آدھی گواہی کے قانون کےخلاف احتجاج کی کال دی تو WAFنے اس کا جواب آمرانہ حکومت سے براہِ راست ٹکرلے کر دیا اور 12فروری 1985ءکو خواتین سڑکوں پر احتجاج کیلئے نکل آئیں۔ اس روز تین سو خواتین ہال روڈ لاہور پر آدھی گواہی کے قانون کےخلاف ہائی کورٹ جانے کیلئے جمع ہوئی تھیں‘ جن کو پولیس کے ذریعہ روکنے کی کوشش کی گئی مگر خواتین نے اس گھیراﺅ کو توڑ ڈالا جس کے بعد اُن پر لاٹھیوں اور آنسو گیس کی بوچھاڑ کردی گئی۔ اس لڑائی میں بہت سی خواتین زخمی ہوئیں جبکہ زیادہ تر کو کوئینز روڈ تھانے کی حوالات میں بند کردیا گیا مگر خواتین نے ہمت نہ ہاری۔

download (1)
اس دن سے ”12فروری پاکستان کی خواتین کے دن“ کے طور پر منایا جاتا ہے۔ آج بھی پاکستان کی عورت اپنے اُن سیاسی‘ سماجی اور معاشی حقوق کیلئے جدوجہد کررہی ہے جس کا وعدہ قائداعظمؒ نے پاکستان بناتے وقت کیا تھا کہ پاکستان اُس وقت تک ترقی نہیں کرسکتا جب تک مرد اور خواتین شانہ بشانہ جدوجہد میں شریک نہ ہوں۔

Show More

متعلقہ پوسٹس

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button