بلوچستان

چمن بارڈر پر جانوروں کی افغانستان سپلائی پر پابندی، خلاف احتجاجی مظاہرہ

چمن کے راستے افغانستان لے جائے جانے والی جانوروں پر پابندی لگائی گئی پابندی کے خلاف چمن میں ہڑتال کی کال دی گئی ہے جسکی وجہ سے احتجاج کرنے والوں نے چمن روڈ ہر قسم کے ٹریفک کے لئے بند کردیا ہے۔ 

احتجاج کی وجہ سے روڈ پر چھوٹی بڑی گاڑیاں کھڑی ہیں اور معمول زندگی متاثر ہوا ہے۔ ان مظاہرین کا کہنا ہے کہ کسٹم اہلکاروں نے کوئٹہ سے چمن جانوروں کی سپلائی روک دی ہے جس کی وجہ سے ان کے روزگار کو کافی نقصان پہنچا ہے۔ ان کے مطابق یہ ہر سال بھاری ٹیکس ادا کرتے ہیںلیکن پھر بھی ان کے روزگار پر پابندی لگادی گئی ہے۔ چمن میں ملازمت کی عدم دستیابی کی وجہ سے زیادہ تر لوگ اس روزگار سے منسلک ہیں۔ ایک احتجاجی تاجر نے ٹی این این کو بتایا ” ہم ایک سال میں حکومت کو کسٹم کی مد میں ایک کھرب روپے تک کا ٹیکس جمع کرتے ہیں، چمن میں نہ بجلی ہے، نہ کھیتی باڑی ہے اور نہ سرکاری ملازمتوں کے مواقع بس یہی ایک روزگار ہے جس پر حکومت نے پابندی لگادی ہے جس سے بھاری تعداد میں لوگ متاثر ہورہے ہیں۔ 

اس بارے کسٹم حکام نے موقف اپنایا ہے کہ یہ اقدام محض سمگلنگ کو روکنے کی خاطر اٹھایا گیا ہے۔ ان کے مطابق کوئٹہ سے چمن کے راستے افغانستان جانوروں کی سمگلنگ ہوتی ہے جس کی وجہ سے کوئٹہ سے چمن جانوروں کی رسد پر پابندی عائد کردی گئی ہے۔

Show More

متعلقہ پوسٹس

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button